- اے پی پی
– اے پی پی

کراچی: کراچی میونسپل کارپوریشن (KMC) نے بدھ کے روز کہا کہ کراچی چڑیا گھر میں ایک نایاب سفید شیر مر گیا جب اس کے پھیپھڑوں نے مبینہ طور پر پلمونری تپ دق کی وجہ سے کام کرنا چھوڑ دیا۔

کراچی کے ایڈمنسٹریٹر بیرسٹر مرتضیٰ وہاب نے شیر کی ہلاکت کے حوالے سے رپورٹ طلب کر لی جو دنیا میں معدوم ہونے والی نسل کا تھا۔

کے ایم سی کے ترجمان علی حسن ساجد نے بتایا کہ شیر گزشتہ 13 دنوں سے بیمار تھا اور پلمونری ٹی بی میں مبتلا تھا۔ جانوروں کے ڈاکٹروں کے ذریعہ اس جانور کا علاج کیا جارہا تھا لیکن وہ صحت یاب نہ ہوسکا اور دم توڑ گیا۔

اس شیر کی عمر 14 سے 15 سال کے درمیان تھی اور اسے 2012 میں افریقہ سے کراچی چڑیا گھر لایا گیا تھا۔ جانوروں کے ڈاکٹروں کی ایک ٹیم نے شیر کا پوسٹ مارٹم کیا اور بیماری اور موت کے بارے میں تفصیلات اکٹھی کیں۔

جانوروں کے ڈاکٹروں کے مطابق شیر کو نمونیا بھی ہوا تھا اور شیر کے پھیپھڑوں نے کام کرنا چھوڑ دیا تھا۔

ایڈمنسٹریٹر کراچی بیرسٹر مرتضیٰ وہاب نے کہا کہ کراچی چڑیا گھر میں سفید شیر کی موت کا سن کر دکھ ہوا کیونکہ دنیا میں سفید شیر بہت کم ہوتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ اگر شیر کی موت کی وجہ سامنے آنے کے بعد کوئی غفلت پائی گئی تو چڑیا گھر انتظامیہ کے خلاف سخت تادیبی کارروائی کی جائے گی۔



Source link

Leave a Reply