تھرپارکر: پیپلز پارٹی اتوار کو ضلع میں اپنی این اے 221 سیٹ کا دفاع کرے گی کیونکہ اس نے پی ٹی آئی اور 10 دیگر سیاسی امیدواروں کے چیلینج کا مقابلہ کیا ہے۔

این اے 221 کے ضمنی انتخاب کے لئے پولنگ صبح آٹھ بجے شروع ہوئی تھی اور توقع ہے کہ شام پانچ بجے تک جاری رہے گی۔

یہ نشست پیپلز پارٹی کے رہنما پیر نور محمد شاہ جیلانی کے کراچی کے ایک مقامی اسپتال میں کورونا وائرس سے لڑتے ہوئے انتقال کر جانے کے بعد خالی ہوگئی۔

پیپلز پارٹی نے جیلانی کے بیٹے پیر امیر علی شاہ جیلانی کو میدان میں اتارا ہے جبکہ تحریک انصاف نے نظام الدین رحیمون کو ضمنی انتخاب لڑنے کے لئے ٹکٹ سے نوازا ہے۔ اگرچہ اس نشست کے لئے 10 دیگر امیدواروں کا مقابلہ ہے ، لیکن امید کی جارہی ہے کہ تحریک انصاف اور پیپلز پارٹی کے امیدوار اس نشست کے لئے آپس میں مقابلہ کریں گے۔

ڈسٹرکٹ ریٹرننگ آفیسر کے مطابق اس حلقے میں کل 281،900 ووٹ ہیں جبکہ حلقے میں کل 318 پولنگ اسٹیشن موجود ہیں۔

ان 318 پولنگ اسٹیشنوں میں سے 95 کو انتہائی حساس جبکہ 130 کو حساس قرار دیا گیا ہے۔

پولنگ اسٹیشنوں کے باہر پولیس اور رینجرز کے ایک اندازے کے مطابق 2 ہزار اہلکار تعینات ہیں۔ انتہائی حساس سمجھے جانے والے پولنگ اسٹیشنوں میں سی سی ٹی وی کیمرے بھی لگائے گئے ہیں۔

این اے 75 ڈسکہ ضمنی انتخاب: پی ٹی آئی ، مسلم لیگ ن کے کارکنوں میں تصادم کے نتیجے میں 2 افراد ہلاک ، 2 زخمی

جمعہ کے روز ، ڈسکہ میں پی ٹی آئی اور مسلم لیگ (ن) کے درمیان ضمنی انتخابی مقابلہ پُرتشدد ہوگیا جب دونوں جماعتوں کے حریف کارکنوں کے تصادم کے نتیجے میں دو افراد کو گولی مار کر ہلاک کردیا گیا اور اتنی ہی تعداد میں زخمی ہوگئے۔

ابتدائی نتائج کے مطابق ، غیر سرکاری ، ابتدائی نتائج کے مطابق جمعہ کو ہونے والے این اے 75 سیالکوٹ ضمنی انتخابات میں مسلم لیگ (ن) کی امیدوار سیدہ نوشین افتخار کافی فرق سے برتری پر ہیں۔

اعداد و شمار کے مطابق ، 360 میں سے 258 پولنگ اسٹیشنوں میں ، مسلم لیگ (ن) 74،165 ووٹوں کے ساتھ سرفہرست ہے۔



Source link

Leave a Reply