پاکستان کے نامور خطیب علامہ سید محمد ذیشان رسول شاہ بخاری صاحب نے محرم کے حوالے سے خطاب کرتے ہوئے فرمایا کہ

وہاڑی:(بیورو رپورٹ) پاکستان کے نامور خطیب علامہ سید محمد ذیشان رسول شاہ بخاری صاحب نے محرم کے حوالے سے خطاب کرتے ہوئے فرمایا کہ 10 محرم کا تاریخی دن شہدائے کربلا کی عظیم قربانی کی یاد دلاتا ہے۔حضرت امام حسین دین کی سرفرازی کیلئے باطل کے سامنے ڈٹ گئے تھے۔انہوں نے اسلام کے روشن اور سنہری اصولوں پر سمجھوتہ قبول نہ کیا۔ یوم عاشور کا عظیم درس یہ ہے کہ مظلوم کا ساتھ دیا جائے اور حق سچ کےلئے کسی بھی قربانی سے دریغ نہ کیا جائے۔
محرم الحرام ہمیں شہادت حسینؓ کی یاد دلاتا ہے اور یہ بتاتا ہے شہادت حسینؓ حق بات پر کھڑے ہوجانے اور ثابت قدم رہنے کا پیغام دیتی ہے۔ تمام مسلمانوں کیلئے صحابہ کرامؓ کا کردار اور زندگی مشعل راہ ہے۔آج ہمیں اپنے رویوں میں صبر اور ایک دوسرے کو برداشت کرنے کی قوت کی ضرورت ہے۔ اسوہ حسینیؓ سے سبق لیتے ہوئے انکے کردار کو اپنالیں تو معاشرے سے تمام مشکلات کا خاتمہ ہوسکتا ہے۔ امام حسین ؓ کی قربانی کا جائزہ لیا جائے تو وہ عزم و استقلال کے ساتھ حق پر ڈٹے رہنے کا نام ہے۔ ظالم کیخلاف ڈٹ جانا اور مظلوم کی مدد کا درس ملتا ہے۔۔خدا کےلئے فرقوں میں مت الجھیں مسّلم بن کے رہیں۔محرم ہمیں یہ بتاتا ہے کہ کربلا میں جنگ نہیں ظلم ھوا تھا۔
” جب بھی کبھی ضمیر کا سودا ہو“
” ڈٹ جاؤ تم حسینؓ کے انکار کی طرح “
انہوں نے مزید فرمایا کہ شہدائے کربلا نے مظلوم انسانیت کو ظالمانہ نظام کے خاتمے اور ظلم و جبر کے خلاف ڈٹ جانے کا حوصلہ اور حق نوائی کا بے مثال درس دیا۔ عاشورہ محرم جہاں ہمیں شہدائے کربلا کی عظیم قربانیوں کی یاد دلاتا ہے وہیں ہمیں یہ سبق بھی دیتا ہے کہ آزمائش کی ہر گھڑی میں صبر و استقامت کا مظاہرہ کرتے ہوئے اللہ تعالیٰ کے حضور سرخرو ہوا جا سکتا ہے۔ واقعہ کربلا کی یاد منانے اور حق و سچ کی سربلندی کی خاطر حضرت امام حسین علیہ السلام اور ان کے جاں نثار ساتھیوں کی عظیم قربانیوں کو خراج تحسین پیش کرنے کا بہترین طریقہ یہ ہے کہ ہم اپنی صفوں میں اتحاد قائم رکھیں۔
ایک وہ یوم عاشور تھا جس دن نواسہ رسول دین کی سربلندی کیلئے سربکف تھے۔آج ایک کرب و بلا کشمیر میں بپا ہے۔
کرفیو کا 41 واں روز ہے، پوری وادی ہی جیل ہے۔
اشیاء خورد و نوش اور ادویات کی شدید قلت اور جنت نظیر کا دنیا سے رابطہ منقطع ہے،
کربلا کا سبق ہے”ظلم پھر ظلم ہے“ بڑھتا ہے تو مٹ جاتا ہے۔
پاکستانی قوم اسوہء شبیری پر عمل پیرا ہے۔
مظلوم کشمیریوں کا ساتھ نہیں چھوڑیں گے۔کشمیری شہدائے کربلا کے راستے پر چل رہے ہیں۔
کشمیریوں کے حوصلوں کو آزمانے والوں کو شکست ہوگی۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here