ایم این اے فیصل واوڈا کی فائل فوٹو۔
  • ذرائع کا کہنا ہے کہ واوڈا نے پارٹی کے لئے قربانیاں دی ہیں
  • وزیراعظم عمران خان آج تحریک انصاف کی سندھ کی قیادت کو اعتماد میں لیں گے
  • پارلیمانی بورڈ نے واوڈا کے خلاف اعتراضات مسترد کردیئے

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک) تحریک انصاف ایم این اے فیصل واوڈا کو آئندہ سینیٹ انتخابات میں اپنا امیدوار نامزد کرنے کے فیصلے پر قائم ہے ، ذرائع نے منگل کو جیو نیوز کو بتایا۔

یہ فیصلہ آج پارٹی کے پارلیمانی بورڈ کے وزیر اعظم عمران خان کے ساتھ زیر صدارت اجلاس کے دوران کیا گیا۔

ذرائع نے بتایا کہ ملاقات کے دوران وزیر اعظم عمران خان نے کہا کہ فیصل واوڈا نے پارٹی کے لئے خدمات انجام دیں۔

حکمران جماعت کے بورڈ نے تحریک انصاف کے ممبروں کے خلاف اٹھائے گئے تحفظات پر تبادلہ خیال کیا جنہیں پارٹی نے امیدوار نامزد کیا تھا۔

ذرائع نے بتایا کہ وزیر اعظم عمران خان آج پارٹی کی سندھ کی قیادت سے خطاب کریں گے اور بورڈ کے فیصلوں پر انہیں اعتماد میں لیں گے۔ وزیر اعظم ویڈیو لنک کے ذریعے سندھ کی قیادت سے خطاب کریں گے۔

دوسری جانب پی ٹی آئی نے لیاقت ترکئی کو سینیٹ انتخابات کے لئے خیبر پختونخوا سے اپنا امیدوار نامزد کرنے کا فیصلہ کیا ہے اور نجیب اللہ خٹک سے ٹکٹ واپس لینے کا فیصلہ کیا ہے۔

سینیٹ کی واوڈا کی نامزدگیوں ، پی ٹی آئی میں بدامنی کا سبب

پی ٹی آئی کے واوڈا اور امیر تعمیراتی ٹھیکیدار سیف اللہ ابڑو کو سینیٹ کے ٹکٹ دینے کے فیصلے نے سندھ سے تعلق رکھنے والے پی ٹی آئی رہنماؤں میں افراتفری پیدا کردی تھی۔ انہوں نے اپنے تحفظات کے اظہار کے لئے گورنر سندھ عمران اسماعیل کو ایک خط لکھا۔

سندھ میں واوڈا اور ابڑو کو سینیٹ کے ٹکٹ دینے پر حکمران جماعت کے اپنے صوبائی باب سے آگ بھڑک رہی ہے۔

خط میں ، تین علاقوں سے پی ٹی آئی کے عہدیداروں نے کہا ہے کہ سینیٹ انتخابات کے لئے پی ٹی آئی کے امیدواروں کے انتخاب سے وہ “اس سارے عمل سے انتہائی مایوس ہیں”۔

خط پر دستخط کرنے والے رہنماؤں میں صداقت علی جتوئی بھی شامل تھے [who is also the brother of former Sindh chief minister Liaquat Jatoi]، پی ٹی آئی سکھر کے ضلعی صدر مبین جتوئی ، اللہ بخش اننار اور راجہ خان جھکھرانی ، سابق صوبائی سکریٹری جنرل محبوز عثرانی ، این اے 214 سے سابق امیدوار شہید بینظیر آباد گل محمد رند ، سابق صوبائی وزیر آغا تیمور خان پٹھان ، پاپو خان ​​چاچڑ اور دیگر دفتر برداشت کرنے والے۔



Source link

Leave a Reply