اتوار. جنوری 24th, 2021


کرک: خیبر پختونخواہ کے کرک میں منگل کو پولیو ورکرز کی سکیورٹی ٹیم پر حملے میں ایک پولیس اہلکار کو گولی مار کر ہلاک کردیا گیا۔

نامعلوم موٹرسائیکل سواروں نے ٹیم پر فائرنگ کردی جس سے میانکی کا رہائشی کانسٹیبل جنید اللہ ہلاک ہوگیا۔ جنید اللہ کا تعلق فرنٹیئر ریزرو پولیس سے تھا۔

پولیس نے بتایا کہ انسداد پولیو ٹیم اس علاقے میں بچوں کو پولیو کے قطرے پل رہی تھی جب ان پر حملہ ہوا۔ حملے کے بعد پولیو حفاظتی ٹیکوں کی مہم کو روک دیا گیا ہے۔

اپر دیر میں پولیو ٹیم پر دوسرے حملے میں ایک لیویز اہلکار زخمی ہوگیا۔ یہ واقعہ اپر دیر ضلع کے انتظامی یونٹ شیرینگل کے قریب ایک گاؤں میں پیش آیا۔

کینڈو کے رہائشی نے انسداد پولیو مہم کے دوران پولیو ٹیم کی سیکیورٹی ٹیم پر لاٹھی اور پتھراؤ سے حملہ کیا

ذرائع کا کہنا ہے کہ ملزمان کو موقع پر ہی گرفتار کرلیا گیا اور شیرینگل پولیس کے حوالے کردیا گیا۔

پاکستان میں 2021 کے لئے پولیو کی پہلی ویکسینیشن 11 جنوری کو شروع ہوئی۔

پولیو حفاظتی قطروں کی قومی مہم پانچ دن جاری رہے گی اور اس کا مقصد پورے پاکستان میں پانچ سال سے کم عمر کے 40 ملین سے زائد بچوں کو پولیو سے بچاؤ کے قطرے پلانا ہے۔



Source link

Leave a Reply